وں پر سب کی رسائی ہو سکےتمام زبانوں کی فہرست دیکھیں جن میں گلوبل وائسز پر ترجمہ کیا جاتا ہے تاکہ دنیا بھر کی کہانیا

بھارتی پروفیسر کس طرح پلاسٹک آلودگی کو ہائی ویز میں بدل رہا ہے

ٹوڈ ریوبولڈ کی اس تحریر کو Ensia.com پر شائع کیا گیا تھا، ایک ایسا میگزین جو بین الاقوامی ماحولیاتی حل پر روشنی ڈالتا ہے،  اور یہاں مواد اشتراک کرنے کے معائدے کے ایک حصے کے طور پر شائع کیا گیا۔

پلاسٹک آلودگی دنیا کا سامنا کرنے والے سب سے بڑے چیلنجوں میں سے ایک ہے۔ گزشتہ ہفتے ہی، سائنسدانوں نے جرنل سائنسی رپورٹوں میں لکھا ہے کہ عظیم پیسفک آلودگی پیچ کا وزن جتنا ہم نے سوچا تھا اس کے مقابلے میں چار سے 16 گنا زیادہ تھا۔

اس کا مطلب یہ ہے کہ پلاسٹک آلودگی کو رسائیکل کرنے اور دوبارہ استعمال کرنے کے طریقوں کو تلاش کرنا کہیں زیادہ اہمیت رکھتا ہے۔

اینٹر راجاگوپلن واسودیون، مادورائی، بھارت میں تھیاگاراجر کالج آف اینجینیرنگ میں پروفیسر۔ ملک میں پلاسٹک آلودگی کے بڑھتے مسئلے کو دیکھتے ہوئے، انہوں نے ایک ایسا طریقہ بنایا جس سے پالسٹک آلودگی کو رسائیکل کر کے لچکدار اور پائدار روڈ بنائے جا سکتے ہیں۔

When I started the work, some of the companies in the United States they came to know that, they were offering a lot of money. They wanted the technology to be given to them, but I said no, we are not giving like that. I'm giving to my country freely.

جب میں نے کام شروع کیا، امریکہ میں کچھ کمپنیویں کو اِس کے بارے میں پتہ لگا، وہ کافی پیسے دینے کو تیار تھے۔ وہ چاہتے تھے کہ ٹیکنولوجی ان کو مل جائے، مگر میں نے نہ بول دیا، کہ میں اس طرح نہیں دینا چاہتا۔ میں اپنے ملک کو فری میں دوں گا۔

آج تک، بھارت میں ہزاروں کلومیٹر ہائی ویز اس کے عمل کے استعمال سے ٹھیک بنائی جا چکی ہیں، تاہم پلاسٹک آلودگی کی مقدار کم ہوئی جو دوسری صورت میں ماحول کو خراب کرتی:

India's got 41 lakhs (4.1 million) kilometers, only 1 lakh is laid. The other roads should be laid. That is the motivation for the whole work.

بھارت کے پاس 41 لاکھ (4.1 ملین) کلومیٹر، جس میں ایک لاکھ بچھائی جا چکی ہے۔ باقی کی سڑکیں بھی بچھانی چاہیے۔ یہ حوصلہ افزائی سارے کام کے لئے ہے۔

یہ ویڈیو بداپیسٹ، ہنگری میں مقام فلم ساز سیٹھ کولمین نے تیار، شوٹ اور ترمیم کی۔

بات چیت شروع کریں

براہ مہربانی، مصنف لاگ ان »

ہدایات

  • تمام تبصرے منتظم کی طرف سے جائزہ لیا جاتا ہے. ایک سے زیادہ بار اپنا ترجمہ جمع مت کرائیں ورنہ اسے سپیم تصور کیا جائے گا.
  • دوسروں کے ساتھ عزت سے پیش آئیں. نفرت انگیز تقریر، جنسی، اور ذاتی حملوں پر مشتمل تبصرے کو منظور نہیں کیا جائے.