وں پر سب کی رسائی ہو سکےتمام زبانوں کی فہرست دیکھیں جن میں گلوبل وائسز پر ترجمہ کیا جاتا ہے تاکہ دنیا بھر کی کہانیا

‎سری لنکا کا مسلمانوں کے خلاف تشدد کے بعد ایمرجنسی کا اعلان

جون 2014 میں سری لنکا میں مسلم خاندانوں کے گھروں کو بدھ مات کو ماننے والے گروہوں نے جلا ڈالا۔ Image via Flickr by Vikalpa|Groundviews|Maatram. CC BY 2.0

بدھ 7 مارچ 2018 کو، سری لنکن حکومت نے سری لنکا کے مرکزی شہر میں بدھ مات کو ماننے والے اور مسلمانوں کے درمیان سامراجی تشدد کو روکنے کے لئے اور عاملیں کو انصاف میں لانے کے لیے ملک بھر میں ہنگامی صورتحال کا اعلان کیا:

سری لنکا نے مسلمانوں کے خلاف دہشت گردی کے بعد ہنگامی طور پر 10 دن ایمرجنسی کا اعلان کیا

بی بی سی سنہالہ کے رپورٹر عزام امین ٹویٹ کرتے ہیں:

سری لنکا نے گزشتہ 7 سالوں میں ہنگامی صورتحال کا پہلا ریاستی اعلان کیا ہے، ہنگامی صورتحال کے تحت، حکام طویل عرصے تک مشتبہ افراد کو گرفتار اور کسی بھی علاقے میں فوج کو بھیج سکتے ہیں۔

تشدد 4 مارچ کو سری لنکا کے مرکزی صوبے کے کنڈی ضلع کے کافی گاؤں میں اتوار کے رات شروع ہوئی، کیونکہ بدھ متوں نے درجنوں مسلمانوں کے کاروبار، چند مساجد اور گھروں پر حملہ کیا۔

اس سارے تشدد کی جڑ مبینہ طور پر نشے میں تین یا چار نوجوان اور 41 سالہ سنہلیسی لاری ڈرائیور، ہیپٹیےگیڈار کمارسنگھے، کے درمیان 22 فروری کو کینڈی کے قریب ٹلڈینیا کے گاؤں میں شروع ہوئی۔

مبینہ طور پر، بدعنوانی ایک ٹریفک واقعے کی وجہ سے تھی نا کہ نسلی یا اخلاقی طور پر۔ کماراسنگھے اور ان کے اسسٹنٹ کو نوجوانوں کے گروپ نے مارا جس سے وہ ہسپتال میں داخل ہو گئے۔ . پولیس نے ابھی تک جرم کے سلسلے میں تین مشتبہ افراد کو گرفتار کیا ہے۔ تمام مشتبہ افراد ڈیگانا، کینڈی کے مسلم نوجوان ہیں۔

 

فسادات نے کیا نظر انداز کیا؟

سری لنکا میں کینڈی کا مقام  Image via Wikimedia Commons by user NordNordWest,. CC BY-SA 3.0

جمعہ کی رات 2 مارچ کو، کمارشنگھے کا زخم کینڈی جنرل ہسپتال میں علاج کرتے ہوئے خراب ہو گیا، جس نے مقامی مظاہرین کو حوصلہ افزائی کی۔ مبینہ طور پر، کمارسنگھے کے خاندان کو معاوضہ دیا گیا تھا اور یہ معاملہ مقامی مسلمانوں اور بدھ مت کمیونٹی کے درمیان کسی کشیدگی کو روکنے کے لئے کافی حد تک آباد تھا۔

تاہم، تشدد اتوار کی رات اور پھر پیر 5 مارچ کو ٹنلڈینیا اور کینڈی ضلع میں ڈیگانا کے گاؤں جیسے مقامات پر شروع ہوا تھا۔ کافی مسلم دکانوں اور گھروں کو انتہا سنہلیسی برادری نے جلا کر مٹی میں ملا دیا تھا۔

تشدد کے واقعات کے بعد مقامی اسکول بند ہی رہے۔ مقامی رہنماؤں کا کہنا ہے کہ فساد کو بڑھانے کے لئے متحرک ملک کے دیگر حصوں سے آئے اور پولیس نے اتنا کچھ نہیں کیا۔ تیسارینی گنسیکارا نے گراؤنڈ ویوز پر لکھا:

 

If the anti-Muslim riot in Teldeniya was a spontaneous explosion of anger, it should have happened either on the day of the assault or on the day the victim died. But up to the evening of March 4th, Teldeniya didn’t explode.

On the evening of March 4th Bhikku (Monk) Galagoda-Atte Gnanasara (Secretary General of Bodu Bala Sena, a Sinhalese Buddhist nationalist organisation) visited the funeral house. A couple of hours later the first attacks began.

اگر ٹنلڈینیا میں مسلم مخالف فسادات غصہ کا ایک جلوہ تھا، تو یہ اس حملے کے دن یا مرنے والے دن ہو جانا چاہیے تھا۔ لیکن 4 مارچ کی شام تک، ٹنلڈینیا دھماکے کی زد میں نہیں آیا۔

4 مارچ کی شام کو، بھیکو (مونک) گلاگودا-اٹی گناناسارا (بدو بالا سنی کے سیکرٹری جنرل، ایک سنہلیسی بدھ ماتا کی قوم پرست تنظیم) نے جنازہ کے گھر کا دورہ کیا۔ اس کے چند گھنٹوں کے بعد پہلے حملوں کا آغاز ہوا۔

ٹنلڈینیا گاؤں میں، سماجی میڈیا پر پیجز نے 5 مارچ، 2018 کو سنہلیسی بدھ ماتا گروہوں کو جمع ہونے کے لیے کہا۔ تقریبا 1 بجے سے، مسلم املاک کی تباہی شروع ہوئی۔

صحافی دھریشا ٹویٹ کرتی ہیں:

 

حکومت نے آج رات شائع ہونے والے بیان میں، سماجی میڈیا کے ذریعے نفرت اور غلط معلومات کی مہم، جو مسلم کمیونٹی پر نشانہ بن رہی تھی، کی مذمت کی۔

فساد کی وجہ سے کم سے کم ایک جان جا چکی ہے۔ 24 سالہ مسلم نوجوان عبدالباسط کی لاش کو ملبے سے باہر نکالا گیا کیونکہ اس کا گھر آگ سے تباہ کردیا گیا تھا۔ پولیس نے اس واقعے سے منسلک درجنوں افراد کو گرفتار کیا۔ پولیس نے ٹیلندینیا پولیس اسٹیشن میں مجمع کو پھیلانے کے لئے آنسو گیس فائر کی جو گرفتار لوگوں کو رہا کرانے کی اپیل لے کر آئے تھے۔ جب وہ صورت حال کو کنٹرول نہیں کر سکے تو فوج کو بلایا جانا پڑا اور مقامی کرفیو نافذ کر دیا گیا تھا۔

7 مارچ تک، کینڈی ضلع کے مختلف علاقوں اور ڈیگانا میں فسادات کے نتیجے میں چار مساجد، 37 گھروں، 46 دکانوں اور درجنوں گاڑیوں کو نقصان پہنچا یا تباہ کر دیا گیا تھا۔ سنہلیسی بدھ مات کے ایک گروہ اور بدھ مات کے پادریوں نے احتجاجی مظاہرہ کیا جس میں تمام بدھ مات کے مشتبہ افراد کی رہائی کا مطالبہ کیا جن پر فساد میں ملوث ہونے کا الزام تھا۔

 

”چار مساجد، 37 گھروں، 46 دکانیں اور 35 گاڑیوں کو  ڈیگانہ اور ٹنلڈینیا میں حملوں کی وجہ سے نقصان پہنچا “ مرکزی صوبائی کونسلر حدایاتھ ستھار

یہ ویڈیو ٹینلڈینیا میں فساد سے ہوئے نقصانات دیکھاتی ہے:

کشیدگی میں اضافہ جاری ہے

مسلمان سری لنکا میں 21 ملین میں سے تقریبا 10 فیصد آبادی رکھتے ہیں۔ 70 فیصد آبادی بدھ مت (بنیادی طور پر تھراواڈا اسکول) کی حامل ہے، جبکہ باقی آبادی ہندو روایات پر عمل کرتی ہے۔ اخلاقی طور پر، 75 فیصد سری لنکن سنہلیس ہیں، تقریبا 10 فیصد سری لنکن مورز (مسلم، تامل بولنے والے) ہیں اور تقریبا 15 فیصد تامل (سری لنکن اور بھارتی) ہیں۔

2012 کی مردم شماری کے مطابق نسلی گروہوں کی سری لنکا میں تقسیم۔ Image via Wikimedia Commons by user BishkekRocks. CC BY-SA 4.0

مسلمانوں اور بدھ مت کو ماننے والے سری لنکا میں دہائیوں تک امن و امان کے ساتھ رہ رہے ہیں۔ لیکن حالیہ برسوں میں دونوں کمیونٹیوں کے درمیان کشیدگی بڑھ گئی ہے۔ 2014 میں، سری لنکا کے مغربی صوبے، کالوٹارا ضلع کے ایک ساحلی شہر الوتھگاما میں فرقہ وارانہ تشدد سے کم سے کم تین مسلمان ہلاک اور 74 زخمی ہوئے۔ بدھ مات گروپ بدہو بالا سینا (بی بی ایس) نے مسلمانوں کے خلاف فسادات میں ایک اہم اور پر تشدد کردار ادا کیا ہے۔

پچھلے سال مسلمانوں پر کئی حملے جن میں فصلوں پر حملے سے لے کر مساجد پر پٹرول بم حملے تک کئی ریکارڈ کیے گے۔ کچھ معاملات میں، بدھ مات کے متنازع افراد نے مسلم کمیونٹی کو نشانہ بنایا جن پر لوگوں کو اسلام میں تبدیل کرنے اور بدھ مات کے آثار قدیمہ کی جگہوں کو تباہ کرنے کے الزامات لگائے۔ نومبر 2017 میں، دو کمیونٹیوں کے درمیان جھڑپ ساحل کے ساتھ گالے اسٹیٹ میں گنٹوٹا میں ہوئی۔

مارچ کے آغاز میں، مشرقی صوبہ امپارہ میں اخلاقی طور پر تشدد کو رپورٹ کیا گیا۔ کئی بدھ مات کی سخت تنظیمیں جو حال میں ہونے والے تشدد سے جڑی ہوئی ہیں، پرانے صدر مہندا راجاپکسے کے سپورٹر ہیں، جس کے پولیٹیکل فرنٹ سری لنکا پودجانا پرامونا (سری لنکا کی عوام کا فرنٹ) نے حال ہی میں مقامی حکومتوں کے انتخابات میں کافی اچھا مظاہرہ کیا۔

تخلیقی ڈائریکٹر اور مشیر امان اشراف نے خبردار کیا:

 

30 سال تک آپ نے اپنی سڑکوں کو اپنے بچوں کے خون سے سرخ ہوتے دیکھا۔ کیا آپ کو نقصان بھول گیا ہے؟ خوف؟ درد؟ مصیبت؟ کیا آپ نے کچھ نہیں سیکھا؟ تم وجہ کب دیکھو گے؟ تم کب کام کرو گے؟

تاہم، ڈنگانا کی صورت حال پر ایک دلکش اپ ڈیٹ ہے:

کرفیو کے دوران بہت سے واقعات کے باوجود مروتھالاوا کے رہائشی کا کہنا ہے کہ ایک بدھ پادری اور نوجوان سنہالا لڑکوں نے اس مصیبت کو سے بچنے کے لیے رات مسجد میں گزاری۔

سری لنکا کے صدر میتھری پالا سریسینا نے واقعہ میں غیر منصفانہ اور آزاد تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔ اپوزیشن کے سری لنکن رہنما آر سمپنتنھن نے بتایا کہ مسلم مخالف حملوں کے مرتکبوں کے درمیان معافیت کا احساس ظاہر ہوتا ہے کہ وہ اس سے دور ہوسکتے ہیں۔

یہ دیکھنا باقی ہے کہ جو فسادات کو شروع کر رہے ہیں انہیں کس طرح انصاف میں لایا جاتا ہے۔

 

بات چیت شروع کریں

براہ مہربانی، مصنف لاگ ان »

ہدایات

  • تمام تبصرے منتظم کی طرف سے جائزہ لیا جاتا ہے. ایک سے زیادہ بار اپنا ترجمہ جمع مت کرائیں ورنہ اسے سپیم تصور کیا جائے گا.
  • دوسروں کے ساتھ عزت سے پیش آئیں. نفرت انگیز تقریر، جنسی، اور ذاتی حملوں پر مشتمل تبصرے کو منظور نہیں کیا جائے.