وں پر سب کی رسائی ہو سکےتمام زبانوں کی فہرست دیکھیں جن میں گلوبل وائسز پر ترجمہ کیا جاتا ہے تاکہ دنیا بھر کی کہانیا

نیویارک پبلک لائبریری کی بدولت برصغیر کی بیتے دنوں کی یادیں اب صرف ایک کلک کی دوری پر

Various men and women in Hindustan (India). (1823 - 1838) Sketch by Andrea Bernieri . Photo from The New York Public Library Digital Collections

ہندوستان میں مختلف مردوں اور عورتوں (بھارت)۔ (1823-1838) اینڈیرا برنیری کا خاکہ نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے لی گئی تصویر.

لوگوں اور جگہوں کی پرانی تصاویر سے ہمیں یہ جاننے میں مدد ملتی ہے کہ چیزیں کس قدر بدل چکی ہیں۔ پرانی تصاویر دیکھ کر ہم اپنے آپ کو ان ادوار میں محسوس کرتے ہیں جب زندگی بہت سادہ معلوم ہوتی تھی۔ وہ دھندھلے چہرے اور عجہب ملبوسات، ایک کے بعد دوسری تصویر ہمیں احساس دلاتی ہے کہ لوگ کیسے رہا کرتے تھے۔

اس ماہ کے اوائل میں نیو یارک پبلک لائبریر نے 180،000 سے زائد ڈیجیٹائیزیڈ اشیاء کو عوامی سطح پر جاری کیا۔ قارین اب اس آرکائیو شدہ مواد تک مفت رسائی حاصل کر سکتے، اس کو ڈاؤنلوڈ کر سکتے ہیں اور ان کی مدد سے نیا مواد بھی تخلیق کر سکتے ہیں۔

ان برقی دستاویزات میں ایشیاء اور شمالی پیسیفک کی پرانی تصاویر اور خاکے بھی شامل ہیں جن سے اس دور کے لوگ کیسے نوآبادیاتی ممالک میں رہا کرتے تھے کا اندازہ لگایا جا سکتا ہے۔ یہ تصاویر تقسیم سے قبل کے برصغیر کی عمارات، ملبوسات، اور رہن سہن کی ایک نایاب جھلک ہیں۔

برصغیر میں آپ کو لاتعداد خوبصورت محلات دیکھنے کو ملتے ہیں جو کہ اس خطہ پر مختلف ادوار کے حکمرانوں نے تعمیر کروائے۔ ممکن ہے ان مقامات کی تصاویر آپ نے پہلے بھی دیکھ رکھی ہوں گی لیکن کیا کبھی پ نے سوچا ہے فوٹوگرافی کے وجود میں آنے سے پہلے کی تصاویر کیسی لگیت ہوں گی؟ یہ دیکھیے:

View of the Palace of Agra, from the river. (1859)

اگرہ محل کا دریا کے کنارے سے نظارے کا خاکہ (1859)۔ نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے تصویر.

اگرہ قلعہ کے اندر واقع جہانگیر محل ہندو اور وسطی ایشیائی فن تعمیر کا حسین امتزاج ہے۔ یہ محل مغل بادشاہ اکبر نے تعمیر کروایا تھا اور یہ اکبر کی راجپوت بیویوں کے ذیر استعمال رہا۔

The king's palace at Delhi. (1859) Photo from The New York Public Library Digital Collections

دہلی کا شاہی محل (1859). نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے تصوی

دہلی کے وسط میں واقع، لال قلعہ دو صدیوں تک برصغیر کے مغل بادشاہوں کا مسکن رہا۔ 1857 تک وقت کے ساتھ ساتھ اس میں بھی تبدیلیاں آتی رہیں۔

اس دور کے لوگوں کی زندگی کیسی تھی؟ یہ کچھ تصاویر اور خاکے اس دور کی عکاسی کرتے ہیں:

Rulers and women from India (1876 - 1888). Sketch by Chataignon. Photo from The New York Public Library Digital Collections

ہندوستان کے حاکم اور خواتین (1876-1888)۔ چَتائگنون کا فن پارہ۔ نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے تصویر

Commander

دہلی میں شائی محافظین کا ایک کمانڈر (1845-1847)۔ نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے تصویر

Dancing Girls At Court Of Rewa, East Central India, 1863-8. Engraver Jacob Ettling. Photo from The New York Public Library Digital Collections

ریوا کی عدالت میں رقاص لڑکیاں، مشرق وسطی بھارت، 1863-8. جیکب ایٹلنگ کی تخلیق. نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے تصویر

An elite Indian women.

ایک اعلی بھارتی مسلم خواتین (1823-1838). اینڈریا پیرینیری کا خاکہ. نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے تصویر.

اور یہ اس دور کے عام لوگوں کے خاکے اور تصاویر ہیں:

A Brahmin praying in the morning. (1851) Lithographer Day and Son. Image from The New York Public Library Digital Collections

ایک برہمن کی صبح کی عبادت (1851). لیٹہوگرافر ڈے اور بیٹے. نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے لی گئی تصویر

A second Caste Pundit (scholar) 1899. Engraver Charles Laplante . Photo from The New York Public Library Digital Collections

ایک دوسری ذات کا پنڈت (عالم) 1899. اکیرک چارلس لاپلانتے کا خاکہ. نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے تصویر

Hindus of Malabar Coast. Photo from The New York Public Library Digital Collections.

مالابار ساحل پر ہندوؤں کا خاکہ. نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے لی گئی تصویر.

Cheetah and the keeper in Jaipur (1894). Photo from The New York Public Library Digital Collections

چیتا اور اس کانگراں جے پور (1894). نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے لی گئی تصویر

Men and Women in India. (1876-1888) Photo from The New York Public Library Digital Collections

ببرصغیر کے مرد و خواتین(1876-1888). نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے لی گئی تصویر

دنیا کی قدیم ترین بچ جانے کیمرے کی تصویر 1827 کی طرف سے ہے۔ برصغیر میں فوٹوگرافی کی آمد بہت بعد میں ہوئی یہ کچھ انیسویں صدی کے برصغیر کی تصاویر ہیں:

A Hindu Goldsmith (Sonar) (1868 - 1875) Photo from The New York Public Library Digital Collections

ایک ہندو سنار (1868-1875). نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے لی گئی تصویر

Hindu Blacksmiths from Madras (1868 - 1875)

مدراس کے ہندو لوہار (1868-1875). نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے لی گئی تصویر.

Diljaan, Bazar Woman, Saharanpoor (1868-1875) Photo from The New York Public Library Digital Collections

سہارنپور بازار کی خاتون، دلی جان (1868-1875) نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے لی گئی تصویر

The Rajpoot tribe (1868 - 1875)

راجپوت قبیلے (1868-1875). نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے لی گئی تصویر.

Snake-charmers in India (1897). Photo from The New York Public Library Digital Collections.

بھارت میں سپیرا (1897). نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے لی گئی تصویر.

Female street musicians in India (1898) Photo from The New York Public Library Digital Collections

بھارت میں خواتین سڑک موسیقار (1898). نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے لی گئی تصویر

اور یہ اس وقت کی مدت سے رسومات اور تہواروں میں سے کچھ مناظر ہیں

The cremation ghat at Calcutta. (1869-1871).

کلکتہ میں شمشان گھاٹ (1869-1871). نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے تصویر

A wedding of British collonials in southern India--the bridesmaids' return from church. (29/1/1887). Sketch by Durand Simon. Photo from The New York Public Library Digital Collections

جنوبی بھارت میں برطانوی نوآباد یاتی دور کی ایک شادی – ‘دلہن کی سہیلیوں کی چرچ سے واپسی (جنوری 29، 1887)۔ ڑیورانڈ سائمن کا خاکہ۔ نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے تصویر

A Hindu marriage. Artist Edwin Lord Weeks. Photo from The New York Public Library Digital Collections

ہندو شادی کا منظر۔ فنکار ایڈون لاڑڈ ویکس۔ نیویارک پبلک الئبریری ڈیجیٹل مجموعے سے تصویر

بات چیت شروع کریں

براہ مہربانی، مصنف لاگ ان »

ہدایات

  • تمام تبصرے منتظم کی طرف سے جائزہ لیا جاتا ہے. ایک سے زیادہ بار اپنا ترجمہ جمع مت کرائیں ورنہ اسے سپیم تصور کیا جائے گا.
  • دوسروں کے ساتھ عزت سے پیش آئیں. نفرت انگیز تقریر، جنسی، اور ذاتی حملوں پر مشتمل تبصرے کو منظور نہیں کیا جائے.