وں پر سب کی رسائی ہو سکےتمام زبانوں کی فہرست دیکھیں جن میں گلوبل وائسز پر ترجمہ کیا جاتا ہے تاکہ دنیا بھر کی کہانیا

تیونس : بغاوت کی سرگوشیاں صرف افواہ ہیں

ابتدائی بدھ کی صبح، 12 جنوری کو تیونس میں ایک بغاوت کی رپورٹ ٹویٹر پر جنگل کی آگ کی طرح پھیل گئی۔صبح کے تقریبا 5:10 بجے سی ای ٹی،وسیم عمارہ (@ wes_m) سب سے پہلے ٹویٹ کرنے والوں کے درمیان تھی:

tt

"فون کی توثیق ہے کہ فوج نے وزارت داخلہ# اندرونی بغاوت # تیونس # زبا کو گھیر لیا ہے"

@ wes_m اور دوسروں کی ٹویٹس کے بعد،ٹویٹر کی نہر بغاوت کی خبر وں کی افواہ سے بھر گئی۔اور اگلہ جال اس امکان پرسب سے پہلے رپورٹ کرنے والوں کا بن گیا :

اطلاعات کے مطابق،جو کہ ہم ٹویٹر پر دیکھ رہے ہیں،بین علی کی حکومت کے خلاف ایک فوجی بغاوت اور صدر زین الابدین بین علی تیونس میں پھوٹ پڑا ۔تاہم، ایسا لگتا ہے کہ مین سٹریم میڈیا کی توجہ ملک میں جنگ کے گزشتہ چند ہفتوں کے واقعات پر سے کم ہو گئی ہے،ایک 26 سال کے قابل ذکر پرانے احتجاجی کے ساتھ جس نے خود کو آگ لگا دی اور بعد میں مر گیا۔

ایک ممکنہ بغاوت کی رپورٹوں کے ساتھ،ایک یو ٹیوب پر تقسیم ویڈیو نے تیونس سفارت خانے کے باہر فرانس میں بڑے پیمانے پر احتجاجی مظاہرے بھی دکھا ئے:

آخر میں، تاہم، ایک فوجی بغاوت کی رپورٹ غلط تھی؛ ناصر ویدادی (@weddady), جن کی ایک ممکن بغاوت کی رپورٹ فورا ایک نئی ٹویٹ بن گئی ، نے معافی مانگ لی، ذکر کرتے ہوئے :

ٹھیک ہے، میں غلط تھا SBZ_ @ پر # تیونس بغاوت کی خبر پر۔#سدی بوزد میری غلطی تھی۔ کوئی بغاوت نہیں۔ دیکھتے رہو۔

جیسا کہ امیر چوچین(@ miroh_) نے اختتام کیا :

آج بغاوت کی افواہ اس بات کا جواب ہے جو لوگ واقعی ہی چاہتے ہیں ۔

بات چیت شروع کریں

براہ مہربانی، مصنف لاگ ان »

ہدایات

  • تمام تبصرے منتظم کی طرف سے جائزہ لیا جاتا ہے. ایک سے زیادہ بار اپنا ترجمہ جمع مت کرائیں ورنہ اسے سپیم تصور کیا جائے گا.
  • دوسروں کے ساتھ عزت سے پیش آئیں. نفرت انگیز تقریر، جنسی، اور ذاتی حملوں پر مشتمل تبصرے کو منظور نہیں کیا جائے.